22

ہم نے پاکستان تسلیم کیا ہے لیکن غلامی تسلیم نہیں کرتے:اچکزئی

پشتونخوا ملی عوامی پارٹی کے سربراہ محمود خان اچکزئی نے بنوں میں پارٹی رہنماء رحم زاد خان مرحوم کی 34 ویں برسی کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہم نے ہر دور اور ہرحال میں افغانستان اور پاکستان کے تمام پشتونوں کے حقوق اور بقاء کی بات کی ہے اور قربانی دے کر جنگ لڑی ہے۔
اس بناء پر ہمیں بے حساب قتل کیا جا رہا ہے ہم نے اپنے مشترکہ دشمن کے خلاف جرگے کرنا ہوں گے ۔روایتی ثلویشتئی بنانے ہوں گے کیونکہ سب سے طاقتور ہماری پشتون قوم ہے اور مظلوم اور تقسیم بھی ہم ہیں۔ امو سے اباسین تک کا علاقہ حصرت عیسی علیہ السلام سے500برس پہلے بھی ہمارا علاقہ تھا جو کسی نے خیرات میں نہیں دیا۔ ہمارے آباو اجداد نے 18ویں صدی میں انگریز کی ہڈیاں توڑی تھی۔ اُنہوں نے کہا کہ قوم کبھی بھی دہشت گرد نہیں ہو تی ۔غلطیاں قوم نے نہیں بلکہ ہمیشہ ڈیورنڈ لائن جیسی غلطیاں مذاکرات کے میز پر ہوئی ہیں۔ پاکستان بننے کے بعد مسلم لیگ کے علاوہ کوئی اور پارٹی نہیں تھی ۔ اس وقت کے پشتون رہنماؤں نے با چا خان ، عبدالصمد خان ، عثمان گل ، حیدر بخش، افتحارالدین و دیگر نے ایک پلیٹ فارم پر جمع ہو کر نیشنل عوامی پارٹی بنائی ۔جس کا ایک ہی مقصد تھا کہ پاکستان ہمارا ملک ہے اس میں تمام اقوام کو برابر کے حقوق دینے ہوں گے۔
جب دیگر اقوام کے بچوں کو حقوق ملتے ہیں تو ہمیں دینے کی صورت میں قیامت تک زندہ باد رہے گا۔ ہم اپنے حقوق زندہ باد و مردہ باد دونوں نعروں کے ذریعے حاصل کرکے دم لیں گے۔ جب پنجاب کا بیٹا پروفیسر ہمارا بچہ چپڑاسی ہو گا تو ایسا ہر گز نہیں مانتے۔ ہم اپنے حقوق زندہ باد مردہ باد ہر صورت میں مانگتے ہیں ۔زبردستی چھیننا بھی آتا ہے مگر ہم ایسا اقدام نہیں اُٹھاتے ۔پشتونوں کے علاقوں میں قدرتی وسائل کے بے پناہ ذخائر ہیں مگر اس پر اختیار پنجاب کا ہے۔ ہمارے علاقوں میں عراق اورخلیجی ممالک سے بھی زیادہ تیل کے ذخائر موجودہیں مگر ہمیں اس پر اختیار نہیں دیا جاتا نہ ہی حصہ دیا جا تا ہے۔ اُنہوں نے کہا کہ نقیب اللہ محسود کی شہادت نے تمام پختونوں کا غصہ جمع کر دیا ہے اور آج پوری دنیا نے پشتونوں کے اس دھرنے سے یکجہتی کا اظہار کرتے ہوئے ہر قسم تعاون کیا ہے اور یہ بھی واضح کرنا چاہتے ہیں کہ محض دھرنا نہیں بلکہ یہ پوری دنیا کے پشتونوں کی طرف سے ہم نے ریاست کیلئے ننواتے کیا ہے ۔اگر پاکستان میں پشتون غلامی تسلیم کرتے ہیں تو اس سے بے غیرت کوئی نہیں۔ ہم نے پاکستان تسلیم کیا ہے لیکن غلامی تسلیم نہیں کرتے۔ پاکستان میں امن افغانستان کے امن سے مشروط ہے۔ تقریب سے پی ایم اے پی کے صوبائی سینئر نائب صدر ڈاکٹر حبیب اللہ ، خورشید کاکا جی ، ڈاکٹر سید عالم محسود ، ارباب مجیب خان ، علی وزیر و دیگر رہنماؤں نے بھی خطاب کیا ۔مقررین نے کہا کہ پشتونوں کو روز اول سے بے وقوف بنایا جا رہا ہے ۔شعر و شاعری ، فلم ، کتابوں میں پشتونوں اور بے وقوف کو ایک ہی صف میں ظاہر کیا گیا ہے۔ اسی طرح 15سال سے دہشت گردی کا لیبل لگایا گیا ہے۔ اس گناہ پر ہمیں قتل اور اُٹھا یا جا تا ہے اور اب تک سینکڑوں کی تعداد میں بے گناہ پشتونوں کو غائب کیا گیا ۔لہذا عدالت میں پیش کیایا جائے۔ ہم پشتونوں کامذاق ، دہشت گردی کا لیبل ، وطن کارڈ ،کرفیو کا نفاذ مزید تسلیم نہیں کرتے ۔ہمیں تفریق کا خاتمہ کرکے اپنے حق کیلئے ایک ہونا ہو گا۔ اُنہوں نے کہا کہ دنیا گلوبل ویلج بن چکی ہے کچھ بھی چھپانا نہیں جا سکتا ۔ہر ظالم بے نقاب ہے۔ مقررین نے مرحوم رحمزاد خان کی خدما ت کو سراہا اور اور کہا کہ اُنہوں نے ہمیں سیاسی شعور دیاپشتونوں کے حقوق پر سودے بازی نہیں کی یہی وجہ ہے کہ آج 34سال بعد بھی ہمارے دلوں میں زندہ ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.