61

کنٹومنٹ بورڈ انتظامیہ کے خلاف شٹر ڈاؤن، پہیہ جام ہڑتال کی دھمکی

نیوجنرل بس سٹینڈ کے ٹرانسپورٹروں،تاجروں،دکانداروں اور اڈہ مالکان نے خودساختہ پروفینشل ٹیکس،لائسنس اور سویپر ٹیکس کو مسترد کرتے ہوئے کنٹومنٹ بورڈ انتظامیہ کو مذاکرات کے ذریعے مسئل حل کرنے کیلئے ایک ہفتے کی ڈیڈلائن دیتے ہوئے مطالبات تسلیم نہ ہونے کی صورت میں شٹر ڈاؤنا ور پہیہ جام ہڑتال کرنے جبکہ کرائے جمع نہ کرنے کی دھمکی دیدی.
نیوجنرل بسسٹینڈ میں حاجی گل پی کی صدارت میں منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئےآل شاپ کیپر یونین ضلع بنوں کے صدر حاجی گل پیر،ہیوی ٹرانسپورٹ یونین بنوں کے صدر ملک نیک دراز خان منڈان،جلیل خان،حضر حیات اور میرجہان شاہ عرف میرجہنی نے کہا کہ کنٹونمنٹ بورڈ کے ایگزیکٹیوآفیسر کی جانب سے نیو جنرل بس سٹینڈ میں خود ساختہ ٹیکسوں کا اعلامیہ تاجروں،ٹرانسپورٹروں اور کاروباری طبقوں سے روٹی کا آخری نوالہ چھینے کی کوشش ہے کیونکہ کنٹونمنٹ بورڈ کی آمدن کروڑوں میں ہے لیکن اسکے باوجود نیو جنرل بس سٹینڈ میں پینے کا صفا پانی میسر نہیں،صفائی کانظام بد تر ہے سڑکیں کھنڈرات میں تبدیل ہیں بارش کی صورت میں اڈہ تالاب اور جھل کا منظر پیش کرتا ہے اڈے میں صرف ایک بجلی ٹرانسفارمر ہے اور سینکڑوں دکانیں ہیں اور بجلی ٹرانسفارمر اوور لوڈ ہوکر جل جاتا ہے پھر تاجر اور ٹرانسپورٹر پیسے جمع کرکے اپنی مدد آپ کے تحت مرمت کرتے ہیں اسکے باوجود کینٹ بورڈ انتظامیہ کی جانب سے سویپر ٹیکس،سائن بورڈٹیکس،پروفیشنل لائنس ٹیکس لگائے جارہے ہیں جبکہ بروقت کرایہ جمع نہ کرنے کی صورت میں 12فیصد جرمانے کا نوٹس بھی ملا ہے مقررین نے کہا کہ تاجر پاکستان کا سب سے پر امن طبقہ ہے جنکے ٹیکسوں سے ملکی نظام چل رہا ہے لیکن خود ساختہ ٹیکس لگاکر اس پر امن کاروباری طبقے کو سڑکوں پر نکلنے پر مجبور کیا جارہا ہے اور نیو جنرل بس سٹینڈ کو آفسران نے تجربہ گاہ بنالیا ہے جو بھی نیا آفیسر آتا ہے وہ ہم پر ٹیکسوں کی صورت میں تجربہ کرتا ہے جبکہ سہولیات کوئی نہیں دیتا ہے ٹیکسوں اور کرایوں میں اضافے سے بوجھ مالک دکان نہیں بلکہ دکانداروں پر پڑتا ہے اور دفتر میں بیٹھے تین اہلکار جو کہ نیب کے ریڈار پر بھی آچکے ہیں آفسران کو یہ غلط مشورے دیتے ہیں لہذا ان نیب زدہ آفسران کو دفتر سے تبدیل کیا جائے مقررین نے کنٹونمنٹ بورڈ انتظامیہ کو ایک ہفتے کی ڈیڈ لائن دیتے ہوئے مسائل ایک ہفتے میں مذاکرات کے ذریعے حل کرنے اور خود ساختی ٹیکس واپس لینے کا مطالبہ کیا بصورت دیگر پہیہ جام اور شٹر ڈاؤن ہڑتال کی دھکمی دیدی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.