16

ناصر الملک نے بطور نگران وزیرِ اعظم ذمہ داریاں سنبھال لیا

پاکستان کے سابق چیف جسٹس ناصر الملک نے جمعے کو نگران وزیرِ اعظم کے منصب کا حلف اٹھانے کے بعد اپنی ذمہ داریاں سنبھال لی ہیں۔ نگران وزیرِ اعظم کی حلف برداری کی تقریب جمعے کو ایوانِ صدر میں ہوئی جس میں مسلح افواج کے سربراہان، صوبائی گورنروں، سابق وفاقی وزرا اور اعلٰی حکومتی شخصیات نے شرکت کی۔ صدر ممنون حسین نے ناصر الملک سے حلف لیا۔

اس موقع پر حکومت کی پانچ سالہ مدت مکمل ہونے کے بعد سبکدوش ہونے والے وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی بھی موجود تھے جنہیں جمعے کی صبح ہی ایوانِ وزیرِ اعظم میں الوادعی گارڈر آف پیش کیا گیا تھا۔

حلف برداری کے بعد اب ناصر الملک اپنی کابینہ تشکیل دیں گے جو 25 جولائی کو ہونے والے انتخابات کے بعد بننے والی حکومت تک نظامِ حکومت چلائیں گے۔

اکتیس مئی کو حکومت ختم ہونے سے قبل قومی اسمبلی کے الوداعی اجلاس کے موقع پر شاہد خاقان عباسی نے کہا تھا کہ اب تمام نظریں شفاف انتخابات پر لگی ہوئی ہیں۔

اگرچہ بلوچستان کی تحلیل ہونے والی صوبائی اسمبلی سے انتخابات کو ایک ماہ کے لیے مؤخر کرنے کی قرارداد منظور ہونے کے بعد انتخابات میں تاخیر سے متعلق قیاس آرائیاں ہو رہی ہیں، لیکن سابق وزیرِ اعظم شاہد خاقان عباسی کا کہنا تھا کہ ملک کے آئین ایسی کوئی گنجائش نہیں ہے۔

اُدھر جمعرات کی شام سیکریٹری الیکشن کمیشن بابر یعقوب نے آئندہ عام انتخابات کا شیڈول جاری کرتے ہوئے ایک بار پھر واضح کیا تھا کہ انتخابات 25 جولائی 2018ء کو ہی ہوں گے۔

انتخابی شیڈول کے مطابق 2 سے 6 جون تک کاغذاتِ نامزدگی جمع کرائے جاسکیں گے جب کہ امیدواروں کی عبوری فہرست 7 جون کو جاری کی جائے گی۔

کاغذاتِ نامزدگی کی جانچ پڑتال 14 جون تک کی جائِے گی جب کہ امیدوار ریٹرننگ افسران کے فیصلوں کے خلاف 19 جون تک اپیلیں دائر کرسکیں گے جس کے بعد امیدواروں کی حتمی فہرست 27 جون کو جاری کر دی جائے گی۔

اُمیدوار 28 جون تک اگر چاہیں تو اپنے کاغذات واپس لے سکیں گے جس کے بعد 29 جون کو اُمیدواروں کو انتخابی نشان الاٹ کیے جائیں گے۔

الیکشن کمیشن کے حکام کہہ چکے ہیں کہ انتخابات کی تیاری مکمل ہے اور اس سلسلے میں انتظامات کو حتمی شکل دی جا رہی ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.