48

ملی مسلم لیگ نظریہ پاکستان کی سیاست پر یقین رکھتی ہے: مرکزی صدر

ملی مسلم لیگ کے مرکزی صدر حافظ سیف اللہ خالد نے کہا ہے کہ ملی مسلم لیگ نظریہ پاکستان کی سیاست پر یقین رکھتی ہے اور ہم پر اپنوں اور بیگانوں کی جانب سے لگائے گئے الزامات میں کوئی صداقت نہیں اور ملی مسلم لیگ کو سازشوں سے محفوظ کرکے ہی دم لیں گے ملک میں مذید تحریب کاری نہیں کرنے دیں گے ہم ملی مسلم لیگ کے نام سے میدان میں کھڑے ہیں اور اس بات کی قسم کھائی ہے کہ اپنی جانوں کو نچھاور کرکے خون کا آخری قطرہ تک بہادیں گے لیکن پاکستان کے خلاف اندرونی وبیرونی سازشیں کامیاب نہیں ہونے دیں گے ان خیالات کا اظہار پریس کلب بنوں میں نظریہپاکستان کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا اس موقع پر صوبائی صدر حاجی لیاقت علی،،ضلعی صدر طارق محمود،سرفراز احمد،جمیعت علماء اسلام سمیع الحق گروپ کے صوبائی امیر مفتی اسلام نور،مفتی محمد قاسم، فاٹا کے امیر مولانا عبدالحئی حقانی،،این اے48کے امیدوار ملک قسمت خان،پیغام یونین کے جنرل سیکرٹری محمد اقبال خان،عبدالرؤف ودیگر منقررین نے کیا مرکزی صدر حافظ سیف اللہ خالد نے مذید کہا کہ ہم نظریہ پاکستان کی سیاست کے ساتھ آئے ہیں کیونکہ یہی نظریہ ہی مشکلات سے نکال سکتا ہے اور ہمارے اتحاد میں ہی ملت کا دفاع موجود ہے انہون نے کہا کہ اس وت ملک میں مخلوط ناظم تعلیم کو تقویت دی گئی ہے جس کا مقصد تعلیم میں بہتری لانا نہیں بلکہ حیاء ،عصمت اور عزت کا جنازہ نکالنا ہے اور ہم ایسا نظام تعلیم لائیں گے جس سے ہماری بچیاں اور بچے ڈگریاں بھی حاصل کریں گے اور ان کی چادر بھی محفوظ ہوگی اور میڈیا کے تعاون سے قوم کے اندر قیام پاکستان اور1965کا جذبہ لاکھڑا کریں گے اور پوری دنیا میں اس چیز پر عالمی ضمیر جھنجھوڑیں گے انہوں نے کہا کہ ہمارا ایجنڈا ایک ہوگا کہ فرقہ واریت کا خاتمہ کریں کیونکہ فرقہ واریت نے قوم وملک کو بنیادی نقصان پہنچایا ہے اور اس وقت ملک کے عوام چار فرقوں مذہبی،صوبائی،لسانی اور سیاسی فرقہ واریت میں تقسیم ہیں جو بہت زیادہ خطرناک ہے انہوں نے کہا کہ نائن الیون کے بعد ہمیں بہت زیادہ لاشیں اٹھانی پڑیں اور دھماکوں کا سامان کیا پاکستان میں قومی اور سیاسی قیادت کا فقدان ہے کیونکہ ہمارے حکمران عوام پر حکم چلاتے ہیں اور امریکہ کی غلامی کرتے ہیں آج یہ لوگ پاکستان میں حافظ سعید کے وجود کو برداشت نہیں کرتے اور پاکستان میں جنگی بہادر اور حق ادا کرنے والی قیادت کو لانا ہوگا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.