42

مثبت سوچ اور منفی سوچ کیا ہے؟

ﻣﺜﺒﺖ ﻭ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ کیا هے ؟
” ﻣﺜﺒﺖ ” ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﺟﻤﻊ ﮐﺮﻧﺎ، ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﺎ ﺑﮍﮬﺎﻧﺎ ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ” ﻣﻨﻔﯽ ” ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮐﻢ ﮐﺮﻧﺎ ﯾﺎ ﮔﮭﭩﺎﻧﺎ۔”
ﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﺮ ﻭﮦ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺗﺮﻗﯽ ﮨﻮ، ﺑﻠﻨﺪﯼ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﭘﯿﺶ ﻗﺪﻣﯽ ﮨﻮ، ﻣﻨﺰﻝ ﮐﺎ ﺣﺼﻮﻝ ﮨﻮ، ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮨﻮ، ﻓﻼﺡ ﻭ ﺑﮩﺒﻮﺩ ﮨﻮ ، ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮨﻮ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﻣﺮﺍﺩ ﮨﺮﻭﮦ ﻓﻌﻞ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮨﻮ، ﺗﻨﺰﻟﯽ ﮨﻮ، ﻣﻨﺰﻝ ﺳﮯ ﺩﻭﺭﯼ ﮨﻮ، ﺗﺨﺮﯾﺐ ﮨﻮ۔ ﻣﺨﺘﺼﺮ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻣﯿﮟ ﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﻭﮦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺗﻌﻤﯿﺮﯼ ﮨﻮ ﺍﻭﺭﻣﻨﻔﯽ ﮐﺎﻡ ﻭﮦ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺗﺨﺮﯾﺒﯽ ﮨﻮ۔ ﺍﭼﮭﺎ ﮔﻤﺎﻥ ، ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﮨﻤﺪﺭﺩﯼ ﻭ ﻣﺤﺒﺖ، ﻣﺸﮑﻼﺕ ﻣﯿﮟ ﮈﭦ ﺟﺎﻧﺎ، ﻣﺼﯿﺒﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﺻﺒﺮ، ﺻﺤﺖ ﮐﯽ ﺣﻔﺎﻇﺖ، ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﻧﺎ، ﺳﭻ ﺑﻮﻟﻨﺎ، ﺳﺨﺎﻭﺕ، ﻭﻓﺎﺩﺍﺭﯼ، ﺍﺣﺴﺎﻥ ﺷﻨﺎﺳﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﺜﺒﺖ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﻭﺳﺮ ﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﺑﺪﮔﻤﺎﻧﯽ، ﻧﻔﺮﺕ، ﺑﻼﺟﻮﺍﺯ ﺗﻨﻘﯿﺪ، ﻏﯿﺒﺖ، ﺑﻐﺾ ﻭ ﮐﯿﻨﮧ، ﭘﺴﺖ ﮨﻤﺘﯽ ﻭ ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ،ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ، ﻏﺼﮧ ﺳﮯ ﻣﻐﻠﻮﺏ ﮨﻮﺟﺎﻧﺎ، ﺑﺨﻞ ، ﺭﯾﺎﮐﺎﺭﯼ، ﺧﻮﺩ ﻏﺮﺿﯽ ﻭﻏﯿﺮﮦ ﻣﻨﻔﯽ ﺭﻭﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻟﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﻥ ﻭﺍﺿﺢ ﻣﺜﺎﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻭﮦ ﻣﺜﺒﺖ ﯾﺎ ﻣﻨﻔﯽ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮨﻮﺗﮯ
ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﺑﺮﻋﮑﺲ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺳﮕﺮﯾﭧ ﭘﯿﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﻭﻗﺘﯽ ﻟﺬﺕ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﻮﻥ ﻣﻠﺘﺎ ﮨﮯ ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﻋﻤﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﮯ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﺳﮯ ﻣﻨﻔﯽ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﺻﺤﺖ ﮐﯽ ﺗﺒﺎﮨﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻤﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﯾﮏ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﻮ ﺟﺎﮒ ﮐﺮ ﺍﻣﺘﺤﺎﻥ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﺗﻮ ﻧﯿﻨﺪ ﮐﺮ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮﻧﺎ ﺍﯾﮏ ﺗﺨﺮﯾﺒﯽ ﻋﻤﻞ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﻣﺜﺒﺖ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﻣﺴﻘﺘﺒﻞ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯼ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﮨﮯ۔
اب ہم منفی سوچ اور مثبت سوچ کو ہم چند مثالوں سے وضاحت کرنے کی کوشش کرتے ہیں :
ایک عام آدمی یا ملازم کا پھولوں یا گلابوں کے باغ کے بارے میں سوچ یہ ہے کہ جہاں پھول یا گلاب ہوتے ہیں وہاں کانٹے بھی ہوتے ہیں جب کہ ایک باغ کے مالی کا سوچ یہ ہے کہ جہاں کانٹے ہوتے ہیں وہاں پھول اور گلاب بھی ہوتے ہیں ۔ اس میں پہلے ادمی یا ملازم کا سوچ منفی جب دوسرے ادمی جو باغ کا مالی ہے اس کا سوچ مثبت کہلائے گا۔ بات ایک ہی ہے لیکن پہلے والے ایک عام آدمی یا ملازم نے اپنی بات منفی سوچ اور دوسرے نے مثبت سوچ سے کہی۔
اس طرح ایک دوسرا مثال یہ ہے۔ کہ ایک مہمان کو کسی نے آدھا گلاس شربت پیش کیا ۔ اب ایک تیسرا آدمی آیا اور انہوں نے سوچا کہ اس مہمان کا گلاس آدھا کیوں خالی ہے جب کہ ایک اور ادمی آتا ہے اور اس ادمی کا سوچ یہ ہے ک شکر ہے کہ شربت کا گلاس آدھا بھرا ہوا ہے۔ اب اس میں پہلے والے کا سوچ منفی سوچ کہلائے گا جب کہ دوسرے کا سوچ مثبت۔ اس مثال میں بھی بات ایک ہی ہے لیکن ادھے گلاس کے بارے میں ایک کا سوچ منفی اور دوسرے کا مثبت کہلائے گا۔
لہذا ہمیشہ مثبت انداز میں سوچو۔ کیونکہ جو لوگ منفی سوچ رکھتے ہیں ان کی زندگی ہمیشہ کانٹوں پر گزرتی ہے ۔ ان کی زنگی میں کھبی کھبی بہار آتے ہے ۔ لیکن بہار میں بھی پھولوں اور گلاب کے خوشبو سے محروم دیکھائی دیتا ہے۔

ﻣﺜﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺳﻮﭺ ﭘﺮ ﻣﻨﺤﺼﺮ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻔﯽ ﺳﻮﭺ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﺷﺨﺺ ﻣﻨﻔﯽ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺟﻨﻢ ﺩﯾﺘﺎ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﺜﺒﺖ ﻓﮑﺮ ﮐﺎ ﺣﺎﻣﻞ ﺗﻌﻤﯿﺮﯼ ﻓﻌﻞ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ﻣﺜﺎﻝ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﺮﺍ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺑﺪﮔﻤﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﻔﺮﺕ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻥ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻣﻮﻗﻊ ﻣﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﺍﻧﺘﻘﺎﻣﯽ ﮐﺎﺭﻭﺍﺋﯽ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﮯ ۔ ﺍﮔﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍﻧﺘﻘﺎﻡ ﮐﯽ ﺁﮒ ﻣﯿﮟ ﺟﻼ ﮐﺮ ﺍﺫﯾﺖ ﮨﯽ ﺩﯾﺘﺎ ﺭﮨﮯ ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﺜﺒﺖ ﺳﻮﭺ ﮐﯽ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﺜﺒﺖ ﻋﻤﻞ ﮐﻮ ﺟﻨﻢ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﻓﺮﺽ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﯾﮧ ﯾﻘﯿﻦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﺟﯿﺖ ﻟﮯ ﮔﺎ۔ ﭼﻨﺎﻧﭽﮧ ﻭﮦ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﺗﻠﮯ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔

ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﻓﮑﺮ ﻭﻋﻤﻞ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯽ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﻧﺎﮐﺎﻣﯽ ﮨﮯ ﺧﻮﺍﮦ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺁﺧﺮﺕ ﺳﮯ ﮨﻮ۔ ﺩﻧﯿﺎﻭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﺣﯿﺎﺕ ﺍﻋﻠﯽٰ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﻮ ﺗﺨﻠﯿﻖ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﻨﺰﻝ ﺗﮏ ﺭﺳﺎﺋﯽ ﺁﺳﺎﻥ ﺑﻨﺎﺗﺎ، ﻣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﮐﺖ ﻻﺗﺎ، ﺍﻭﻻﺩ ﮐﻮ ﺻﺎﻟﺢ ﺑﻨﺎﺗﺎ، ﺷﺮﯾﮏ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﻮ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﻭ ﺳﮑﻮﻥ ﺩﯾﺘﺎ، ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺧﻮﺵ ﺭﮐﮭﺘﺎ، ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﮐﺮﻭﺍﺗﺎ ، ﺍﻋﻠﯽٰ ﺻﺤﺖ ﻭ ﻣﻌﯿﺎﺭ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺩﯼ ﻓﻼﺡ ﻭ ﺑﮩﺒﻮﺩ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﺍﺛﺒﺎﺗﯽ ﺭﻭﯾﮧ ﺩﯾﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﮔﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﻮﺍﺗﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮐﺮﺗﺎ، ﺍﺱ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮯ ﮐﮯ ﻟﺸﮑﺮ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﺗﺎ، ﺁﺧﺮﺕ ﮐﯽ ﺗﯿﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺗﺎﺯﮦ ﺩﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﻵﺧﺮ ﺟﻨﺖ ﮐﯽ ﺑﺴﺘﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭨﮭﮑﺎﻧﮧ ﻣﯿﺴﺮ ﮐﺮﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﺟﺎﻧﺐ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ ۔ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﻣﻨﻔﯿﺖ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺫﮨﻨﯽ ﻣﺮﯾﺾ ﺑﻨﺎﺗﯽ، ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ، ﺻﺤﺖ ﺑﺮﺑﺎﺩ ﮐﺮﺗﯽ ، ﺭﺯﻕ ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﺑﺮﮐﺘﯽ ﻻﺗﯽ، ﺣﺴﺪ ﻭ ﺟﻠﻦ ﮐﮯ ﺍﻻﺅ ﺟﻼﺗﯽ، ﻧﻔﺮﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻨﮕﻞ ﺍﮔﺎﺗﯽ، ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﺟﺪﺍ ﮐﺮﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﺷﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻔﺮﯾﻖ ﮐﺮﺍﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺩﯾﻨﯽ ﺍﻣﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﯾﮩﯽ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯ ﺣﯿﺎﺕ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺑﺪﮔﻤﺎﻥ ﮐﺮﺗﺎ، ﺍﺳﮯ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﭘﺮ ﺍﮐﺴﺎﺗﺎ، ﺗﮑﺒﺮ ﮐﯽ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ، ﻋﺒﺎﺩﺕ ﺳﮯ ﺑﺮﮔﺸﺘﮧ ﮐﺮﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﯾﻮﺳﯽ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ ﮐﻔﺮ ﮐﯽ ﺟﺎﻧﺐ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺳﻨﺖ ﺟﺒﮑﮧ ﻣﻨﻔﯽ ﻃﺮﺯ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﮐﺎ ﻓﻌﻞ ﮨﮯ۔ ﻧﺒﯽ ﮐﺮﯾﻢ ﺻﻠﯽ ﺍﻟﻠﮧ ﻋﻠﯿﮧ ﻭﺳﻠﻢ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﺜﺒﺖ ﻃﺮﺯ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﮯ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻨﻔﯽ ﺳﻮﭺ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ، ﺍﻥ ﺳﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺟﮭﮕﮍﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺳﺐ ﻣﺨﺎﻟﻔﯿﻦ ﺷﮑﺴﺖ ﮐﮭﺎﮔﺌﮯ ﺗﻮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﻌﺎﻑ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔ ﺁﭖ ﻧﮯ ۱۳ ﺳﺎﻟﮧ ﻣﮑﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﮐﭩﮭﻦ ﻭﻗﺖ ﮔﺬﺍﺭﺍ ﻟﯿﮑﻦ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﺳﮯ ﺷﮑﻮﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﺎ ﺩﺍﻣﻦ ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﮨﺠﺮﺕ ﮐﮯ ﻣﻮﻗﻊ ﭘﺮ ﻏﺎﺭ ﺣﺮﺍ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﮑﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺏ ﭘﺮ ﻣﮑﻤﻞ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﺭﮐﮭﺎ۔

ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮔﻮﺍﮦ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﭘﯿﻐﻤﺒﺮ ﺳﺮﺧﺮﻭ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺷﯿﻄﺎﻥ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﻭ ﻧﺎﻣﺮﺍﺩ ﮨﻮﺍ۔ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﺑﮭﯽ ﮔﻮﺍﮦ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ﮐﮧ ﻣﺜﺒﺘﯿﺖ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﻔﯿﺖ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ ﮐﮧ ﺧﻮﺍﮦ ﻭﮦ ﺩﻧﯿﺎ ﮨﻮ ﯾﺎ ﺁﺧﺮﺕ۔ انشاء اللہ

مزید تفصیل کے لئے https://www.easyustaad.com/life/success/positive-and-negative-thinking-in-urdu دیکھا جا سکتا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں