12

طالبان پر پابندیاں ختم کرنے‘ اہل خانہ کو ویزا اور پاسپورٹ کی فراہم کرنے کو تیار ہیں: اشرف غنی

افغان صدر اشرف غنی نے ملک بچانے‘ کے لیے طالبان کو امن عمل کا حصہ بننے کی دعوت دیتے ہوئے پاکستان کو بھی حکومتی سطح پر مذاکرات کی پیش کش کردی ہے۔افغان نشریاتی ادارے کے مطابق کابل میں دوسری امن کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اشرف غنی نے کہا کہ ہم ماضی کو بھلا کر ایک نیا باب شروع کرنا چاہتے ہیں اور پاکستان کے ساتھ مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔
افغان صدر نے طالبان کو ایک مضبوط پیغام دیتے ہوئے کہا کہ آج امن ان کے ہاتھ میں ہے اور میں طالبان کے گروپ سے مطالبہ کرتا ہوں کہ وہ ہماری پیش کش کو قبول کریں اور افغانستان کے ساتھ امن مذاکرات میں شامل ہوں۔ انہوں نے کہا کہ افغان حکومت امن عمل میں شامل ہونے والے طالبان کو سہولیات اور سیکورٹی فراہم کرے گی اور ہم امن مذاکرات میں طالبان کے خیالات کو ترجیح دیں گے۔
اس موقع پر اشرف غنی نے اعلان کیا کہ افغان حکومت طالبان راہنماﺅں اور ان کے اہل خانہ کو پاسپورٹ جاری کرے گی اور ان کے اور ویزا کے لیے کابل میں ایک دفتر بھی کھولا جائے گا جبکہ ہم طالبان راہنماﺅں کے خلاف عائد پابندیوں کو ختم کرنے کے لیے بھی اقدامات کریں گے۔ انہوں نے کہا افغانستان کا امن طالبان کے ہاتھوں میں ہے‘طالبان افغان حکومت کا ساتھ دیں، ہم طالبان راہنماﺅں پر پابندی ختم کرنے کے لیے کام کریں گے‘طالبان اور ان کے اہل خانہ کو ویزا اور پاسپورٹ کی فراہم کیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ ہم پاکستان کے ساتھ ماضی کو بھلا کر نئے باب کا آغاز کرنا چاہتے ہیں اور حکومتی سطح پر مذاکرات کے لئے بہترین مقام کابل ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں