67

ایران: خواتین نے 40 برس بعد سٹیڈیم میں فٹبال میچ دیکھا

ایرانی خواتین نے کئی دہائیوں کے بعد تہران کے سٹیڈیم میں مردوں کا ایک فٹبال میچ دیکھا ہے۔ حکومت کی جانب سے انھیں یہ میچ دیکھنے کی اجازت دی گئی تھی۔

سنہ 1979 کے اسلامی انقلاب کے بعد خواتین پر سٹیڈیم میں جا کر مردوں کے میچ دیکھنے پر پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

ایرانی میں فٹبال کے کھیل میں جنسی امتیاز کا معاملہ اس وقت عالمی سطح پر منظر عام پر آیا جب سحر خدایاری نامی لڑکی نے اس عدالت کے باہر خود کو آگ لگا لی جہاں ان کے خلاف مرد کے بھیس میں ایک فٹبال میچ دیکھنے کی کوشش کرنے پر مقدمہ چلایا جانا تھا۔ ایک ہفتے کہ بعد 29 سالہ سحر خدایاری کا انتقال ہو گیا تھا۔

BBC URDU کی فیس بک پر پوسٹ کا خاتمہBBC URDU کی فیس بک پر پوسٹ سے آگے جائیں
اس واقعے کے بعد ایرانی حکومت پر عوام کی جانب سے بہت تنقید کی گئی اور خواتین کو اجازت دینے کے لیے دباؤ میں اضافہ ہوا۔

فٹبال کی عالمی تنظیم فیفا نے بھی ایران پر دباؤ ڈالا کہ وہ خواتین کو میچ دیکھنے کی اجازت دے۔

تاہم ایرانی حکومت کے حالیہ فیصلے کو انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ’سستی شہرت‘ حاصل کرنے کی کوشش قرار دیا ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل نے جمعرات کو اپنے بیان میں کہا کہ خواتین شائقین کے لیے محدود ٹکٹ جاری کیے گئے۔ تنظیم نے خواتین کی شرکت پر عائد تمام پابندیاں ختم کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

جمعرات کو ساڑھے تین ہزار سے زیادہ خواتین نے ایران اور کمبوڈیا کے درمیان ورلڈ کپ کوالیفائر میچ دیکھا اور اس وقت ان کی خوشی کی انتہا نہ رہی جب ایران نے یہ میچ صفر کے مقابلے میں 14 گول سے جیت لیا۔

تہران کے آزادی سٹیڈیم میں ان خواتین کے لیے مخصوص انکلوژر بنائے گئے تھے۔ سٹیڈیم میں 78 ہزار افراد کی گنجائش ہے۔

اطلاعات کے مطابق خواتین کے ٹکٹ منٹوں میں فروخت ہو گئے۔

سٹیڈیم کے میں خواتین شائقین کو ایرانی پرچم لہراتے اور اپنی ٹیم کے لیے نعرے لگاتے دیکھا جا سکتا ہے۔

فیفا نے اس ہفتے اپنے بیان میں کہا کہ وہ مضبوطی سے اپنے موقف پر قائم ہے کہ ایران میں خواتین کو فٹبال میچوں تک مکمل رسائی حاصل ہو۔

سعودی عرب میں بھی گزشتہ برس خواتین کو فٹبال میچ دیکھنے کی اجازت دی گئی تھی۔ یہ فیصلہ ان اصلاحات کا حصہ تھا جن کے تحت قدامت پسند ملک میں خواتین سے متعلق کچھ قوانین کو نرم کیا جا رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.