31

آل پاکستان تحفظ ختم نبوت کانفرنس کا انعقاد

دی بنوں – بنوں میں عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے زیر اہتمام تاریخی مسجد حافظ جی بنوں شہرمیں آل پاکستان تحفظ ختم نبوت کانفرنس کا انعقاد کیا گیا جسمیں کثیر تعداد میں علماء کرام،حفاظ کرام اور دینی مدرسوں کے مہتممین وطلباء کرام نے شرکت کی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نائب امیر مرکزیہ عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت مولانا صاحبزادہ خواجہ مولانا عزیز احمد کندیاں شریف،مولانا قاضی احسان احمد کراچی،مولانا مفتی محمد رضوان عزیزی چناب نگر چینوٹ،مولانا عابد کمال،ضلعی امیر مفتی عظمت اللہ سعدی،ضلعی خطیب مفتی عبدالغنی ایڈوکیٹ،مولانا حفیظ الرحمن ،مہتمم مدرسہ عربیہ معراج القرآن وسیکرٹری نشرواشاعت عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت ضلع بنوں حاجی محمد آیاز،نائب مہتمم حافظ زین العابدین،مولانا حفیظ الرحمن المدنی، صوبائی امیر مفتی شہاب الدین پاپولزئی،رضوان عزیز،مرکزی رہنما احسان احمد شجاع آبادی،مولانا طیب طوفانی اورمولانا عابد کمال ودیگر مقررین نے کہا کہ قادیانی کیسی رعایت کے مستحق نہیں کیونکہ پاکستان کے آئین میں اسے غیر مسلم اقلیت قرار دیا گیا ہے اور جو بھی نبوت کا جھوٹا دعویٰ کریگا وہ دائرہ اسلام سے خارج،غیر مسلم اور کافر ہوگا انہوں نے کہا کہ مرزا غلام احمد قادیانی انگریزوں کا مہرہ تھا اور اس کو مسلمانوں میں جہاد کا جذبہ ختم کرنے کیلئے تیار کیا گیا تھا لیکن انگریز نے خود تسلیم کیا کہ انکی یہ سازش ناکام ہوئی اور انگریزکی یہ سیاسی چال مسلمانوں نے اتحاد واتفاق سے ناکام بنادی انہوں نے کہا کہ قادیانیوں نے روز اول سے پاکستان کو تسلیم نہیں کیا اور طرح طرح کی سازشیں کیں یہ پاکستان کیلئے ناسور ہیں اور کافر سے بھی بد تر ہیں کیونکہ ان لوگوں نے ختم نبوت پر شب خون مارا ہے اور مسلمانوں کو بھی چاہیئے کہ وہ ختم نبوت کے صدقے میں قادیانیوں کی مصنوعات کا مکمل بائیکاٹ کریں کانفرنس کے دوران عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے ضلعی امیر مفتی عظمت اللہ سعدی نے قراردادوں کے ذریعے مطالبہ کیا کہ قادیانی پاکستان میں کلیدی عہدوں پر فائز ہیں سپریم کورٹ کے چیف جسٹس ثاقب نثار ان کے خلاف سوموٹو ایکشن لیں اور آئین پاکستان کا تحفظ کرتے ہوئے ان کو نہ صرف عہدوں سے ہٹائیں بلکہ جو تنخواہیں مسلمانوں کے ٹیکس پیسوں سے لی ہیں وہ بھی واپس لیکر ان کو سرکاری خزانے میں جمع کیا جائے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.